ناموری، تنویری اور “میں”—-جلو فٹ بال گراونڈ تباہی کے دهانے پر ……… تحریر: آغا محمد اجمل

خروف تہجی میں لفظ “ن” اپنے اندر خاص الخاص اہمیت سمیٹے ہوئے ہے. تن من دهن سے کی گئی کاوش کی بدولت ناموری کنیز بن کرآپ کی قسمت کے گن گا رہی ہوتی ہے. لیکن اگر دوسری طرف تن من دهن سے کی گئی کاوش کو “میں” کا تڑکا لگا دیا جائے تو تنویری نامرادی کے شکنجے میں بری طرح پهنس جاتی ہے.
جلو فٹ بال گروانڈ اپنے محلے وقوع کی وجہ سےخاص اہمیت لیے یوئے یے. جلو پارک لاہور کے قلب میں واقع یہ گروانڈ دلنشین قدرتی پر فضا ماحول کی وجہ سے فٹ بالرز کی پسندیدہ ہے. جلو فٹ بال گراونڈ کی رونقوں کو قائم دائم رکهنے میں میاں عباس نے کلیدی کردار ادا کیا ہے. میاں عباس جس طرح سے سالہا سال سے جلو فٹ بال گراونڈ کی رونقوں کو قائم کیے ہوئے ہیں یہ صرف انہی کا حاصہ ہے.
لیکن کچه “میں” کی گردان الاپنے والوں نے محکمہ وائلڈ لائف کے توسط سے جلو فٹ بال گراونڈ کی رونقوں کو ماند کرنے ہر تلے ہوئے ہیں.
انتہائی باوثوق ذرائع کے مطابق جلو فٹ بال گراونڈ کو قصہ پارینہ بنانے کی جستجو میں الیکشن کمیشن کے سابقہ عہدے دار جو کہ آج کل لاہور ڈسٹرکٹ فٹبال ایسوسی ایشن میں کلیدی عہدے پر فائز ہیں نے “میں” کا خوب استعمال کیا ہے