اولمپیئن منصور احمد..پاکستان کا ایک درخشاں ستارہ بجھ گیا..چلو کراچی بیچ گیمز تو ہوگئے نا..شرم تم کو مگر نہیں آتی…!

کراچی(اسپورٹس ورلڈ نیوز) اولمپیئن منصور احمد…خاموشی سے اس دنیا فانی سے کوچ کرگئے…اولمپیئن منصور احمد وہی قومی ہیرو تھے جنہوں نے 1994ہاکی ورلڈ کپ میں یقینی گول روک کر اس ملک کو ورلڈ چیمپیئن بنایا…قومی کھیل کے قومی ہیرو جو گزشتہ چند ماہ سے دل کے عارضے میں مبتلا تھے.طبیعت بگڑنے پر کل آئی سی یو میں منتقل کیاگیا.جہاں زندگی نے ساتھ چھوڑ دیا اور اس دنیا فانی سے کوچ کرگئے.دوسری طرف کراچی میں اسپورٹس کے نام نہاد سرکاری ٹھیکیداروں کی زیر سرپرستی بیچ گیمز کرائے گئے جس کی آج اختتامی تقریب کراچی میں منعقد کی گئی. کراچی شہر میں ہلہ گلہ کرتے ہوئے بیچ گیمز منعقد کئے جارہے تھے جبکہ چند منٹ کے فاصلے پر قومی ہیرو اولمپیئن منصور احمد کا جنازہ پڑھا جارہا تھا.مزکورہ جنازے میں ایم کیو ایم کے ڈپٹی کنوینئر عامر خان ,پی ایچ ایف سیکریٹری شہباز احمد سینئر اور سابق کپتان شاہد خان آفریدی ,سندھ اسپورٹس بورڈ ڈائریکٹر شہزاد بھٹی کے علاوہ کسی اعلی سیاسی ,اسپورٹس یا بیچ گیمز کے ٹھیکیداروں میں سے کسی نے شرکت نہیں کی.بعد ازاں ڈرامائی انداز میں حکومتی اور اسپورٹس ٹھیکیداروں کے بیانات خوب چلے.اخلاقی طور پر کراچی لیول پر ہونے والا بیچ گیمز جو صرف اسپانسرز کے ہڑپ کرنے کیلئے منعقد کیا تھا مزکورہ بیچ گیمز کو موخر کرنا چائیے تھا.لیکن ان ٹھیکیداروں کیلئے پاکستانی ہیرو جنکے نام پر پیسے کھاتے ہیں انکی کوئی قدر و قیمت نہیں.البتہ انکے جانے کے بعد انکے نام پر خودنمائی ضرور کرتے ہیں.یہ ہمارے معاشرے اور اس ملک کیلئے لمحہ فکریہ سے کم نہیں.آج ہمیں سوچنا پڑے گا.ان پاکستانی ہیروز کیلئے جو اپنی کسمپرسی میں گزار رہے ہیں.اگر نہیں سوچا پھر کبھی اس ملک میں اولمپیئن منصور احمد دوبارہ پیدا نہیں ہوگا.