دنیا کے بلند ترین مقام پر ٹور دی خنجراب سائیکلنگ روڈ ریس کا آغاز 11 مئی کو گلگت سے ہوگا، 74کھلاڑی حصہ لیں گے ،تیاریاں مکمل ،افتتاح حافظ حفظ الرحمن کریں گے

گلگت(صوفی ہارون سے ۔سپورٹس ورلڈ نیوز) دنیا کے بلند ترین مقام پر منعقد ہونے والی ٹور دی خنجراب انٹر نیشنل سائیکلنگ روڈ ریس کا آغاز گیارہ مئی کو دن دس بجے گلگت سے ہوگا جس میں پاکستان افغانستان اور سوئس سائیکلسٹ حصہ لیں گئے۔ سطح سمندر سے4500فٹ کی بلندی سے شروع ہونے والی ٹور دی خنجراب انٹر نیشنل سائیکلنگ روڈ ریس16000فٹ سے زائد بلندی پر واقع خنجراب کے مقام پر پہنچ کر اپنے اختتام کو پہنچے گی۔یہ بات چیف کمشنر گلگت محمد عثمان۔سیکرٹری سپورٹس و ٹورزم وقار علی خان اس ریس کے آرگنائزنگ سیکر ٹری ہارون جنرل نے سیکرٹری پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن سید اظہر علی۔ڈی سی گلگت سمیع اللہ۔ڈی سی نگر نوید احمد ۔ڈی سی ہنزہ کیپٹن علی اصغر اورسائیکلنگ ٹیکنیکل آفیشل نثار احمد نے آج یہاں گلگت میڈیا نمائندگان سے گفتگو کرتے ہوئے بتائی۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے دنیا کے بلند ترین مقام پر ٹور دی خنجراب انٹر نیشنل سائیکلنگ روڈ ریس کا آغاز 11 مئی کو گلگت سے ہوگا، 74کھلاڑی حصہ لیں گے ،تیاریاں مکمل ،افتتاح وزیر اعلی حافظ حفظ الرحمن کریں گے

چیف کمشنر گلگت محمد عثمان کا کہنا تھا اس ایونٹ کے کامیاب انعقاد کے لئے انتظامی افسران نے دن رات محنت کر کے تمام تیاریاں مکمل کر لی ہیں تاکہ اس ایونٹ کو ہر لحاظ سے کامیاب بنایا جا سکے انہوں نے بتایاکہ اس ایونٹ میں شرکت کے لئے 74کے قریب ملکی اور غیر ملکی کھلاڑی گلگت پہنچ چکے ہیں،اور گذشتہ کئی دنوں سے یہاں اپنی ٹریننگ بھی کر رہے ہیں۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے سیکر ٹری سپورٹس و ٹورزم گلگت بلتستان کا کہنا تھا کہاس ایونٹ کے جی بی میں انعقاد سے جہاں سائیکلنگ کے کھیل کو فروغ حاصل ہوگا وہیں اس ایونٹ کے دنیا کے بلند ترین مقام کے انعقاد سے ہم دنیا کو اس سیاحتی خطہ کو دنیا کے سامنے بھی اجاگر کرنا چاہتے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے بتایا کہ آرگنائزنگ کمیٹی کے پلان کے مطابق اس ایونٹ کے میں مقابلے میں تو مقامی کھلاڑی شریک نہیں ہو ئیں گے تاہم انکی حوصلہ افزائی کے لئے انہیں ریس کے پیچھے آنے کی اجازت ہوگی اور انکی حوصلہ افزائی بھی جائے گی۔ اس موقع پر سے گفتگو کرتے ہوئے سید اظہر علی شاہ سیکر ٹری سائیکلنگ فیڈریشن سید اظہر علی شاہ کا کہنا تھا کہ ہم چاہیں گے کہ یہ ایونٹ کامیاب ہو اور مستقبل میں ہم اس ایونٹ کو یو سی آئی کلینڈر کا حصہ بنوا سکیں تاکہ اس میں زیادہ سے زیادہ غیر ملکی شرکت کریں اور نہ صرف سائیکلینگ کو فروغ حاصل ہو بلکہ گلگت بلستان میں ٹورزم بھی بڑھے۔اس ریس کے آرگنائزنگ سیکرٹری ہارون جنرل کا ایونٹ کے حوالے سے تفصیلات بناتے ہوئے کہنا تھا کہ پہلے مر حلہ میں ریس گیارہ مئی کو صبح دس بجے گلگت سے شروع ہوکر گل میت (نگر) راکا پوشی ویو پوائینٹ کے مقام پر جا کر اپنے اختتام کو پہنچے گی۔اس مرحلے کھلاڑی میں 66کلو میٹر کا فاصلہ طے کریں گے۔ کھلاڑی گیارہ اور بارہ مئی کو گل میت (نگر) راکا پوشی ویو پوائینٹ کے مقام پر ہی کیمپوں میں قیام کریں گے۔اگلے روز ریس کا دوسرا مرحلے گل میت (نگر) راکا پوشی ویو پوائینٹ کے مقام سے شروع ہوگا جو سست کے مقام پر جا کر اپنے اختتام کو پہنچے گا،یہ مرحلہ110کلو میٹر طویل ہوگا۔12 اور13 مئی کی درمیانی رات ریس کے شرکاء سست میں قیام کریں گے۔ ریس کا تیسرا اور آخری مرحلہ سست سے شروع ہوگا اور خنجراب پر پہنچ کر اپنے اختتام کو پہنچے گا اس مرحلے میں سائیکلسٹ 84کلو میٹر کا مرحلہ طے کریں گے جس کے بعد 13مئی کی شام کو سائیکلسٹ خنجراب سے واپس کریم آباد آئیں گے جہاں فاتح کھلاڑیوں میں انعامات تقسیم کرنے کی تقریب اور میوزیکل نائیٹ منعقد کی جائے گی۔ انہوں نے بتایاکہ اس سائیکل ریس کا اہتما م گلگت بلتستان حکومت اور پاکستان سائیکلنگ فیڈریشن کے تعاون سے کر رہی ہے