پاکستان کی 14رکنی والی بال ٹیم 24جولائی سے یکم اگست تک انڈونیشیاء کے شہر سورابیا میں ہونے والی19 ویں ایشیئن مین والی بال چیمپئن شپ میں حصہ لے گی :چوہدری محمد یعقوب

اسلام آباد(سپورٹس ورلڈ نیوز) پاکستان والی بال فیڈریشن کے چیئر مین چوہدری محمد یعقوب نے کہا ہے کہ پاکستان کی 14رکنی والی بال ٹیم 19ویں ایشیئن مین والی بال چیمپئن شپ میں حصہ لینے جا رہی ہے ،غیر ملکی وپاکستانی کوچز نے کھلاڑیوں کی شاندار تربیت کی ہے جس کی وجہ سے اچھے نتائج کی توقع ہے ، مستقبل میں قومی وال بال ٹیم کو اوپر لیکر جائینگے جبکہ رواں سال کے آخر میں نیشنل والی بال لیگ کا انعقاد کرنے جا رہے ہیں۔گذشتہ روز ایرانی کوچ حامد مواحدی اور پاکستانی کوچ مظہر کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے چوہدری محمد یعقوب نے کہا کہ آنیوالے دنوں میں والی بال کا کھیل بلندیوں کی طرف گامزن ہوگا،وال بال کے کھیل میں بہت تبدیلیاں آ چکی ہیں،ایرانی کوچ حامد مواحدی اور پاکستانی کوچز مظہر اور جمیل نے بہت محنت کی ہے اور نوجوان کھلاڑیوں کو تیار کیا ہے۔دیگر کھیلوں کی طرح والی بال کے کھیل کیلئے بھی سرمایہ کاری کی ضرورت ہے،ہم ایران کی طرز پروالی بال لورزکیلئے روزانہ ایک سو روپے کے پروگرام کا آغاز کرنے جا رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی 14رکنی والی بال ٹیم 19ویں ایشیئن مین والی بال چیمپئن شپ میں شرکت کریگی جو کہ 24جولائی سے یکم اگست تک انڈونیشیاء کے شہر سورابیا میں کھیلی جائیگی جس میں 16ٹیمیں شرکت کرینگی جن کو چار مختلف گروپوں میں تقسیم کیا گیا ہے ،پاکستان گروپ بی میں شامل ہے جس میں ایران ،چائینیز تاپے اور عراق کی ٹیمیں شامل ہیں،نصیر قومی ٹیم کی قیادت کریگا۔ہماری ٹیم 16جولائی کو قطر روانہ ہوگی جہاں پہ وہ قطر اور عراق کیساتھ سیریز میں شرکت کریگی اور 20جولائی کو وہ انڈونیشیاء روانہ ہوگی جہاں پہ وہ جاپان یا کسی اور ٹیم کیساتھ پریکٹس میچ میں حصہ لیگی۔ ،پاکستان اپنا پہلا میچ چائینیز تاپے سے،دوسرا میچ ایران سے جبکہ تیسرا میچ عراق سے کھیلے گا۔چوہدری محمد یعقوب نے کہا کہ روان سال نیشنل والی بال لیگ کروانے جا رہے ہیں جس میں 6سے8ٹیمیں شرکت کرینگی۔اس ٹونامنٹ میں شرکت پر40لاکھ روپے سے زائد اخراجات آئینگے۔انہوں نے کہا کہ مستقبل میں اچھے سپنسر ملنے کا امکان ہے،والی بال فیڈریشن کا تنازعہ ختم ہو چکا ہے،تمام لیول کے کھلاڑیوں کو اپ گریڈ کرینگے اور جونیئر سطح پر ٹیلنٹ ہنٹ پروگرام کرنے جا رہے ہیں،والی بال کے کھیل کا معیار بہتر بنانے سے ہمیں بھی کرکٹ کی طرح پیسہ ملیگا۔ایرانی کوچ حامد مواحدی نے کہا کہ نوجوان کھلاڑیوں کی اچھی تربیت کی ہے اور ان سے اچھے نتائج کی توقع ہے۔