پشاور کی باصلاحیت سکواش کھلاڑی لائبہ اعجازکے آگے بڑھنے کا سفر شروع ،آئندہ ماہ سے امریکہ میں منعقدہ یوایس اوپن سکواش چمپئن شپ میں پاکستان کی نمائندگی کریںگی ،وہ دورگیاجب خواتین محض گھر کا کام کاج اورروٹیاں پکانےتک محدودتھیں،ثابت کیاکہ خواتین مردوں سےپیچھےنہیں بلکہ چند قدم آگےہیں،لائبہ اعجاز

ملاقات:غنی الرحمن
پشاورسے تعلق رکھنے والی سکواش کی باصلاحیت کھلاڑی لائبہ اعجاز15سے18دسمبر تک امریکہ کے شہر بوسٹن میں منعقدہ یوایس جونیئر اوپن سکواش چمپئن شپ میں پاکستان کی نمائندگی کریںگی،جنہیں ویزہ بھی لگ گیااس میگا انونٹ میں دنیابھر سے 9ہزار ٹاپ جونیئر زکھلاڑی اپنی دیس کی نمائندگے،لائبہ اعجازبہت خوش اورپر عزم بھی کیونکہ قومی لیول کے بعد اب انٹرنیشنل سرکٹ میں بھی سکواش میں بلندیوں کا سفرشروع کررہی ہیں اولین بین الاقوامی ایونٹ یوایس اوپن میں سبزہلالی پرچم کیلئے نیک نامی کا باعث بنے گی کیونکہ وہ جب ریکٹ ہاتھ میں تھام کرجیت کے جذبے سے سرشار ہوکر کورٹس میںاترتی ہیں ، انہوں نے کہاکہ وہ دور گزرگیاجب خواتین محض گھر کا کام کاج اور روٹیاں پکانے تک محدودتھیں ،حالانکہ خواتین بھی انتہائی باصلاحیت ہیں لیکن بدقسمتی سے انہیںآگے بڑھنے اور ملک کیلئے خدمات انجام دینے کے مواقع فراہم نہیں کئے جاتے اورجب مواقع ملنے لگے تو ثابت کیاکہ کسی بھی میدان میں خواتین مردوں سے پیچھے نہیں بلکہ چند قدم آگے ہیں۔ان خیالات کا ظہار انہوں نے پشاور میں سپورٹس ورلڈ پی کے سے گفتگوکرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے کہاکہ سکواش کی دنیامیں پاکستان اور خصوصاًپشاور ایک منفر دمقام ہے ،اعظم خان،روشن خان،قمرزمان ،جہانگیر خان اورجان شیرخان سمیت کئی دیگر کھلاڑیوں نے مسلسل سکواش کی دنیاپر حکمرانی کی ہے تاہم بعدمیں دوسری کھیلوں کی طرح سکواش میں بھی ہم بہت پیچھے چلے گئے لیکن انشاء اللہ وہ دن دور نہیں جب ایک مرتبہ پھر اس ٹائٹل کو دوبارہ حاصل کرینگے جسکے لئے انہوں نے دن رات ایک کرکے محنت شروع کر رکھی ہے میرے حوصلے بلند ہیں اپنی نظریں ورلڈ نمبر ون کی ٹائٹل پرہے انشاء اللہ ایک دن اس خواب کو حقیقت میں بدل کر دکھائوںگی۔

ایک سوال کے جواب میں لائبہ کا کہناتھاکہ انہوں نے محض 10سا ل کی عمر سے سکواش کھیلنا شروع کیاانہوں نے باقاعدہ تربیت سکواش کے سابق عالمی چمپئن قمرزمان کی قیادت میں پی اے ایف سکواش کمپلیکس میں قائم سکواش اکیڈمی سے حاصل کی اوراپنی کامیابی کا سفر لاہورمیں منعقدہ 32ویں نیشنل گیمزمیں گولڈ میڈل لیکر شروع کیااور یہ سلسلہ آج تک جاری ہے اللہ کے فضل سے انڈر11,13اورانڈر15کٹیگری کے قومی چمپئن رہی ہوں،فیڈریشن کے زیر اہتمام منعقدہ ڈی جی رینجرنیشنل چمپئن شپ سمیت قومی لیول کے51 مختلف مقابلوں میں شرکت کرکے کئی میڈلزا پنے نام کئے اوران مقابلوں میں کئی تجربہ کار اور نامی گرامی کھلاڑیوں کو شکست سے دو چار کیااسکے علاوہ سی اے ایس جونیئر انٹر نیشنل ایونٹ میں بھی کھیل چکی ہوں اوراسلام آباد میں منعقدہ پہلے یوتھ گیمز میں برائونزمیڈل ،جبکہ دوسری میں انفرادی اور ٹیم ایونٹ میں دو گولڈمیڈلزجیتے جس پر اس وقت کے وزیر اعظم شاہد خان قان عباسی نے زبردست پذیرائی کرتے ہوئے ایک لاکھ روپے کیش اور ٹرافی سے نوازگیا اور اب وہ انڈر17کٹیگری کے ٹائٹل کیلئے بھی پرعزم ہیں ،انہوں نے کہاکہ ان کا تعلق ایک سپورٹس مین گھرانے سے ہے والداعجاز احمد خان سپورٹس جرنلسٹ ہیں جبکہ بڑابھائی اتھلیٹکس اور دوسرابھائی حمام احمدسکواش کے مایہ ناز کھلاڑی ہیں جو جونیئر برٹش چمپئن شپ میں پاکستان کی نمائندگی کھیلنے کا اعزازحاصل کرینگے ،لائبہ نے بتایاکہ انکی کامیابی میں قمرزمان ،جان شیر خان اور محب اللہ خان کا اہم رول ہے کیونکہ انہوں نے میری کاکردگی کو سراہتے ہوئے بھر پور حوصلہ آفزائی کی ،میں واحد کھلاڑی ہوں جنہیں سکواش پر حکمرانی کرنے والے کھلاڑیوں جان شیر خان اور قمرزمان سمیت ورلڈ چمپئن کے فائنلسٹ کھلاڑی محب اللہ خان نے مجھے اپنے ریکٹس دیئے ہیں جس سے انکے حوصلے مزید بلند ہوگئے اور ایک عہد کیاکہ انشاء اللہ اپنی شانداپرفارمنس کے بدولت ورلڈ چمپئن کا ٹائٹل جیت دم لوںگی اور اللہ کے فضل سے میرے لئے راستے آہستہ آہستہ کھلناشروع ہوگئے۔لائبہ نے کھیل کیساتھ ساتھ تعلیم کے میدان میں بھی کامیابی کا تسلسل جاری رکھتے ہوئے اس تاثر کو غلط قراردیدیاکہ کھیلنے والاسٹوڈنٹ پڑھائی میں کمزو ر ہوتاہے انہیں جب سکول گرین ویچ داخل کیا تو پڑھائی میں اچھی تھی اور اسی طرح آگے بڑھتی ہوئی نامی گرامی کالج فرنٹیئر کالج برائے خواتین میں داخلہ ملااور یہاں سے ایف ایس سی کیااور اس وقت وہ بنوں میڈیکل کالج کی سٹوڈنٹ ہے ۔ ایک سوال کاجواب دیتے ہوئے لائبہ نے بتایاکہ وہ دور گزرگیاجب خواتین محض گھر کا کام کاج اور روٹیاں پکاتی تھی ، خواتین انتہائی باصلاحیت ہیں لیکن بدقسمتی سے انہیںآگے بڑھنے اور ملک کیلئے خدمات انجام دینے کے مواقع فراہم نہیںکئے جاتے اورجب مواقع ملنے لگے تو ثابت کیاکہ کسی بھی میدان میں خواتین مردوں سے پیچھے نہیں بلکہ چند قدم آگے ہیں ۔ واضح رہے کہ یوایس اوپن چمپئن شپ میں انکے علاوہ میل جونیئر ٹیم کے انڈر 13کٹیگری میں ان کا بھائی حمام احمد،انڈر15میں عباس نواز، محمد حمزہ اور ولیدخلیل جبکہ انڈر17کٹیگری میں عماد احمد ،معاویہ حسن او ر خوشحال ریاض شامل ہیں ،قومی ٹیم 10دسمبر سے اسلام آباد ایئرپورٹ سے امریکہ کیلئے روانہ ہونگے۔