گلف کپ فٹبال ٹورنامنٹ کا کویت میں شاندار انعقاد فائنل میں اومان نے متحدہ عرب امارات کو شکست دے دی رپورٹ: امجد عزیز ملک سیکرٹری جنرل اے آئی پی ایس ایشیا

کویت گذشتہ ہفتے کھیلوں کے بین الاقوامی فٹ بال ٹورنامنٹ کے حوالے سے ساری دنیا خاص طور پر عرب ممالک کے شائقین فٹ بال کی توجہ کا مرکز رہا۔عرب گلف فتبال مقابلے کویت میں جس انداز سے منعقد کئے گئے اس کی جتنی تعریف کی جائے کم ہے۔ اس سے پہلے کہ ان مقابلوں پر نظر دوڑائی جائے اگر انتظامات کا جائزہ لیا جائے تو یہ اندازہ لگانا قطعی مشکل نہ ہو گا کہ محض ایک ہفتے کے اندر نہ صرف جابر فٹ بال سٹیڈیم کی تزئین و آرائش کی گئی بلکہ عرب ممالک سمیت دنیا کے مختلف ممالک سے آنے والے ساڑھے تین ہزار کے لگ بھگ پرنٹ و الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں کے لے کوریج کے شاندار انتظامات کئے گئے۔ایشیائی سپورٹس جرنلسٹس تنظیم اے آئی پی ایس ایشیا کے صدر ستام ال سہلی کے مطابق ان مقابلوں کا انعقاد کویت کی حکومت اور خاص طور پر کویت فٹ بال ایسوسی ایشن کے لئے کسی چیلنج سے کم نہ تھا اور انہوں نے اس چیلنج کو قبول کرتے ہوئے ہر ممکن کوشش کی کہ مقابلے احسن طور پر منعقد ہوں بلکہ یادگار بھی رہیں اور انہیں خوشی ہے کہ مختلف ممالک سے آنے والے ہزاروں سپورٹس جرنلسٹس، کیمرامینوں اور باالخصوص شائقین فٹ بال نے گلف کپ کا بھرپور لطف اٹھایا۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ مقابلے پہلے 2015 میں منعقد ہونا تھے جو ملتوی کر دئیے گئے بعد میں کویت فٹ بال ایسوسی ایشن کو معطل کر دیا گیا اور مقابلوں کا انعقاد ممکن نہ ہو سکا جس کے بعد گلف کپ کی میزبانی قطر کو دے دی گئی جس نے دسمبر میں ان مقابلوں کا انعقاد کرنا تھا تاہم فیفا کی جانب سے پابندی ختم ہونے کے اعلان کے بعد کویت نے گلف کپ کے انعقاد کا چیلنج قبول کیا اور یوں گلف کپ کی میزبانی توقعات کے مطابق بھرپور انداز میں کی۔
22 دسمبر 2017 سے 05 جنوری2018 تک منعقد ہونے والے ان مقابلوں میں آٹھ ٹیموں نے شرکت کی جن میں میزبان کویت کے علاوہ سعودی عرب، اومان، یمن، متحدہ عرب امارات، بحرین، عراق اور قطر کی ٹیمیں شریک ہوئیں۔آٹھ ٹیموں کو دو گروپس میں تقسیم کیا گیا تھا۔گروپ اے میں اومان، عرب امارات، سعودی عرب اور کویت کو رکھا گیا جبکہ گروپ بی میں عراق، بحرین ، قطر اور یمن کی ٹیمیں شامل تھیں۔گروپ اے کے میچز میں سعودی عرب کے میزبان کویت کے خلاف دو ۔ایک گول سے کامیابی حاصل کی۔عرب امارات نے اومان کو ایک گول سے ہرایا۔سعودی عرب اور عرب امارات کے درمیان کھیلا جانے والا میچ بغیر کسی گول کے برابر رہاجبکہ اومان نے میزبان کویت کو ایک گول سے ہرا دیا ۔یوں کویت کی ٹیم کو اپنے دوسرے لیگ میچ میں شکست کا سامنا کرنا پڑا۔آخری لیگ میچ میں اومان نے سعودی عرب کے خلاف دو گول سے کامیابی حاصل کی جبکہ سعودی عرب کی ٹیم کوئی گول نہ کر سکی۔دوسری طرف کویت اور ورب امارات کے درمیان کھیلا جانے والا میچ بغیر کسی گول کے برابر رہا تاہم لیگ میچوں کے اختتام پر پول اے سے عرب امارات اور اومان کی ٹیموں نے ٹورنامنٹ کے سیمی فائنلز کے لئے کوالی فائی کر لیا۔ گروپ بی میں قطر نے یمن کے خلاف چار گول سے کامیابی حاصل کر کے مقابلوں میں اپنے سفر کا شاندار آغاز کیا۔بحرین اور عراق کے درمیان کھیلا جانے والا میچ ایک ایک گول سے برابر رہا۔


بحرین اور عراق کے درمیان کھیلا جانے والا میچ ایک ایک گول سے برابر رہا۔یمن اور بحرین کے درمیان کھیلا جانے والا میچ بحرین نے ایک گول سے جیت لیا یمن کی ٹیم کوئی گول نہ کر سکی۔اپنے پہلے میچ میں کامیابی حاصل کرنے والی قطر کی ٹیم غیر متوقع طورپر عراق کے ہاتھوں ایک کے مقابلے میں دو گول سے شکست کھا گئی۔لیگ کے آخری میچ میں بحرین اور قطر کے درمیان مقابلہ ایک ایک گول سے برابر رہا جبکہ عراق نے یمن کی ٹیم کو تین گول سے ہرا دیا۔ یمن کی ٹیم کوئی گول نہ کر سکی۔یوں بحرین اور عراق نے پول بی سے سیمی فائنل کھیلنے کا اعزاز حاصل کیا۔پہلا سیمی فائنل بحرین اور اومان کی ٹیموں کے درمیان کھیلا گیا ۔اومان نے مد مقابل بحرین کو ایک گول سے شکست دے کر فائنل کی دوڑ سے خارج کر دیا جبکہ دوسرا سیمی فائنل متحدہ عرب امارات اور عراق کے درمیان کھیلا گیا یہ میچ متھدی عرب امارات کی ٹیم نے جیت کر فائنل میں جگہ بنا لی۔مقررہ وقت تک میچ برابر رہا جس کے بعد دونوں ٹیموں کو پنلٹی شوٹ آؤٹ دی گئیں جس پر متحدہ عرب امارات نے دو کے مقابلے میں چار گول سے کامیابی حاصل کی۔
فائنل اومان اور متحدہ عرب امارات کی ٹیموں کے درمیان کھیلا گیا خیال کیا جا رہا تھا کہ تیس ہزار سے کم تماشائی یہ فائنل دیکھیں گے کیونکہ میزبان ٹیم کویت پہلے ہی ٹورنامٹ سے خرج ہو چکی تھی لیکن مقامی شائقین بھی حیران ہو گئے کہ فائنل دیکھنے کے لئے 65 ہزار تماشائیوں کی گنجائش والے جابر سٹیڈیم میں 55 ہزار سے زیادہ تماشائی موجود تھے جنہوں نے فائنل سے بھرپور لطف اٹھایا۔مقررہ وقت تک مقابلہ بغیر کسی گول کے برابر رہا جس کے بعد دونوں ٹیموں کو اضافی وقت دیا گیا اس دوران بھی کوئی ٹیم گول نہیں کر سکی جس کے بعد پنلٹی ککس دی گئیں جس پر اومان نے متحدہ عرب امارات کو چار کے مقابلے میں پانچ گولوں سے شکست دے کر فاتح ہونے کا اعزاز حاصل کر لیا۔یہ دوسرا موقع ہے جب اومان نے گلف کپ میں کامیابی حاصل کی ہے اس سے پہلے اومان نے 2001 میں فتح حاصل کی تھی۔یہ امر بھی دل چسپ ہے کہ بین الاقوامی درجہ بندی میں اومان 101 ویں جبکہ متحدہ عرب امارات 73 ویں پوزیشن پر ہے۔ فائنل جیتنے کے بعد جابر سٹیڈیم میں اومان کے شائقین کی جانب سے دل کھول کر جشن منایا گیا ہزاروں کی تعداد میں فائنل دیکھنے والے اومانی شائقین کی خوشی کا ٹھکانہ نہ تھا۔ فاتح ٹیم نے گلف کپ کی ٹرافی وصول کی تو سارا سٹیڈیم تالیوں سے گونج اٹھا اور کافی دیر تک اومانی شائقین فٹبال اپنی ٹیم کو داد دیتے رہے۔اس طرح اومان کی شاندار فتح کے ساتھ یہ ٹورنامنٹ اپنے اختتام کو پہنچا تاہم ہزاروں شائقین جنہوں نے سٹیڈیم میں میچ دیکھا اور کروڑوں شائقین جنہوں نے ٹیلی وژن پر براہ راست میچ سے لطف اٹھایا تا دیر اس میچ کو یاد رکھیں گے۔