تازہ ترین
بنیادی صفحہ / اتھلیٹکس / حکومت کی کھیلوں اور کھلاڑیوں کے معاملات سے عدم توجہی قابل افسوس، حکومت اہم کھیلوں کے کھلاڑیوں کی تربیت کے لئے طویل المدتی کیمپ لگائے : اولمپین شبانہ اختر

حکومت کی کھیلوں اور کھلاڑیوں کے معاملات سے عدم توجہی قابل افسوس، حکومت اہم کھیلوں کے کھلاڑیوں کی تربیت کے لئے طویل المدتی کیمپ لگائے : اولمپین شبانہ اختر

لاہور 11 فروری (سپورٹس ورلڈ نیوز) سابق اولمپین قومی اتھلیٹکس چیمپین و سیف گولڈ میڈلسٹ خاتون اتھلیٹ شبانہ اختر نے کہا ہے کہ حکومت کی جانب سے کھیلوں اور کھلاڑیوں کے معاملات سے عدم توجہی قابل افسوس ہے،کھلاڑیوں کو مسلسل تربیت میں رکھے بغیر ان سے عالمی ایونٹس میں اچھے نتائج کی توقع کرنا زیادتی ہے ۔کھلاڑیوں کو بیرون ملک مقابلوں میں بھیجنا نہ بھیجنا حکومت کا استحقاق لیکن اندرون ملک انکی اعلی معیار کی تربیت کے لئے کیمپس کا سلسلہ نہیں رکنا چاہئیے اولمپین شبانہ اختر سپورٹس ورلڈ پی کے ڈاٹ سے خصوصی گفتگو کر رہی تھیں۔ ایک سوال کے جواب میں انکا کہنا تھا کہ خواتین کھلاڑیوں کی جانب توجہ مبذول کرنا تو دور کی بات ہے ، ہمارے ہاں مرد کھلاڑیوں کو بھی کوئی نہیں پوچھ رہا جسکے کھیلوں پر انتہائی منفی اثرات مرتب ہورہے ہیں۔ انہوں نے خصوصی طور پر اتھلیٹکس کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب جیسے بڑے صوبہ کے دارلحکومت لاہور میں واحد ٹریک نشتر پارک میں ہے جہاں بھی جب کبھی کوئی اور ایونٹ ہو اتھلیٹس کو ٹریننگ کرنے سے روک دیا جاتا ہے ایسے میں ہم توقع کریں کہ اتھلیٹکس کا کھیل ترقی کرے گا یہ دیوانے کا خواب تو ہو سکتا ہے اس سے زیادہ کچھ نہیں۔

شبانہ اختر کا سپورٹس ورلڈ پی کے ڈاٹ کام سے گفتگو کرتے ہوئے مذید کہانا تھاکہ ماضی میں کھلاڑیوں کی جسطرح حوصلہ افزائی اور دیکھ بھال کی جاتی تھی آج کے دور میں وہ ختم ہوچکا ہے۔ ٹیلنٹ کے باوجود نوجوان کھیلوں کے میدان میں نہیں اُترتے کیونکہ وہ سمجھتے ہیں کہ انکا معاشی مستقبل کھیلوں میں نہیں۔ انہوں نے کہا کہ کھلاڑیوں کو اچھی ملازمتیں دئیے بغیر انہیں کھیلوں کی توجہ متوجہ نہیں کیا جا سکتا۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان خود کھلاڑی تھے تو انکے آنے سے کھلاڑیوں کو کھیلوں کے معاملات میں بہتری کی توقع تھی مگر بد قسمتی سے اب حالات پہلے جیسے بھی نہیں رہے۔انہوں نے کہا کہ بطور اتھلیٹ اور خاتون وہ پاکستان میں اتھلیٹکس اور خواتین سپورٹس کا فروغ چاہتی ہیں،اور اس سلسلہ میں پہلے بھی اپنے حصہ کا کردار ادا کرتی رہی ہیں اور آئندہ بھی تیار رہیں گیں۔